𝐊𝐡𝐚𝐭𝐚𝐦 𝐍𝐮𝐛𝐚𝐰𝐰𝐚𝐭 𝐊𝐢 𝐀𝐬𝐚𝐥 𝐇𝐚𝐪𝐞𝐞𝐪𝐚𝐭 – (ختمِ نبوتؐ کی اصل حقیقت)




𝐊𝐡𝐚𝐭𝐚𝐦 𝐍𝐮𝐛𝐚𝐰𝐰𝐚𝐭 𝐊𝐢 𝐀𝐬𝐚𝐥 𝐇𝐚𝐪𝐞𝐞𝐪𝐚𝐭 – (ختمِ نبوتؐ کی اصل حقیقت)

May 8, 2021

پھول شیطان الرجیم بسم اللہ رحمان رحیم اکرام اسلام علیکم ورحمتہ اللہ وبراکاتہ کتب سیدنا حضرت اقدس مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ مخالفین کی طرف سے اٹھائے جانے والے اعتراضات کے جواب خدمت میں لے کر حاضر ہیں خاکسار عبدالوہاب کے ساتھ مولانا حنیف چودھری صاحب تشریف فرما ہیں اعتراضات کے جواب دیں گے صاحب ہم براہین احمدیہ پر بات کر رہے ہیں آپ مخالفین پر اعتراض ہے جناب آپ کے سامنے رکھوں گا وہ پرائمری سے ہے کہتے ہیں کہ براہین احمدیہ کے زمانہ میں خود مرزا صاحب ختم نبوت کے عقلی تھے یعنی کہ نبوت کا دروازہ بند ہو گیا ہے کہتے ہیں کہ اس کا اظہار انہوں نے فارسی کے اشعار میں کیا ہے وہ شیر ہے کہ ختم شد بر نفس پاک سحر کمال لاجرم شدہ ختم کرے لیکن کہتے ہیں کہ بات کی جو تحریر کا زمانہ ہے اس میں خود ہی نبوت کا اس کے بارے میں کچھ ہمارے سامنے ان کے سامنے پیش کریں یہ جو ختم فضائے خاتمالنبیین ہے یا لفظ ختم ہے کھیت میں اس معاہدے سے اس کے معنی ختم کرنا یہ ایک مجازی معنی ہیں خاتم جو لفظ ہے اس کے پانچ معنے ہیں دو قی 3 جوتا لوازمات اتنا ستر امام نے بیان کیا ہے کہ بعض اوقات اس کے مجازی معنی یہ نہیں جاتے ہیں ان تینوں میں سے ایک مانا جو ہے یہ ہے کہ کہتے ہیں کہ ہوتا رہتا برو منہ و بلغنا کرے وہ منہ وکیل ختمۃ القرآن اللہ ہے انتہائی تو الاخری سیکی اب کہتے ہیں کہ اسی وقت اس کے یہ معنی بھی اس سے پہلے یہ تو جواب دو میں یہ لفظ بیان کر چکے ہیں باقی میں نے اور تین جو آنے والے ہیں تو اس میں ایسا کہتے ہیں کہ بلو آخر تک پہنچ جاؤں گا ان معنوں کو یہ اختیار کرکے نبوت بند کردے اب دیکھیں کہ یہ لفظ جو ہے عمران خان نے اور یہ قرآن کریم کی سب سے مستند اور ڈکشنری ہے اس میں کہتے ہیں کہ بعض اوقات آخری حصہ لینا اور اس کی مثال یہ ہے کہ ٹائم ختم قرآن ختم کر دے قرآن کریم کی تلاوت کر کے سورۃ اخلاص پڑھے تو اس کے بعد عموما اکثر قرآن میں جو تباہ ہوئے ہیں ان کے آخر میں ایک دعا ختم القرآن لکھیا بالکل ہوتی آپ اس تک پہنچے بالکل اسی طرح کتنے اچھے معنی ہیں جو حکومت کی ہدایت کے لئے ہمارے ائمہ نے اور یہ حقیقت ہے اور سچے معنے ہیں اب کوئی یہ نہیں کہتا کہ آپ قرآن میں نے آخر تک پہنچے سورج کی آخری سانسوں تک میرے پاس گیا ہے وہی انداز ہونے تک پہنچ رہا لیکن اس کا بھی حق ہے کہ جب ختم کا لفظ چار معنوں میں استعمال کریں گے تو اس نے بھی اس کی انتہا یہ اعظم صاحب فرماتے ہیں ختم شد نفس فاقہ شرک مال لاجرم خوش و خرم رکھے مجھے بہت باکمال شہر ہے جس میں کہتے ہیں کہ ہر کمال جو تھا پاک کمال رسول کے سلسلے میں وہ بلو ویل انتہا ہوا ہے آخر ہوا ہے اسے آگے جاکر کوئی آدمی سوچ نہیں سکتا کہ اس سے بڑی خوبی قسمت ختم کرنا وہ بند کر دینا یہی وجہ ہے کہ انہوں نے حضور صلی وسلم کی نبوت کو ختم کر دیا ہوا ہے سارے اعمال ان کے سارے ان کے قانون وراثت جگہ ہے ابوسفیان نہیں جانتے مگر یہ مانے اس طرح خوبصورت ہے اور اس میں ان کے عقیدہ کو پہنچا دیا آپ نے اور اسی طرح ہر کی جو خوبی تھی ہر پیغمبر کی جنگ ہوتی رہی تھی اس قرآن کریم میں لا کر آپ نے اس کی تصدیق کرکے اس کو روشن کر کے دکھایا ہے ورنہ اگر بائبل میں انبیاء کا حال پڑے تو بعض اوقات تو ان پر لکھے ہوئے ہیں تو اس سے حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو آخر تک پہنچایا ہے اور اس ان معنوں کی تصدیق از مسیح کے کلام میں بھی ہے کے مطالعے سے ان باتوں کو لے جاتے ہو تم تم یہ نہ سمجھنا یہ صرف عادت ہی نام اور زمانے کمانے کے لئے آپ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر ختم ہو چکی ہیں یعنی وہ نعمتیں ایک کمال تک پہنچ کے استعمال کے ساتھ حکومت میں جاری ہوئی ہے اس طرح جاری ہوئی کہ آپ نے ان کمالات کو اپنے جو زبانی علامات قیامت کے ان کو نبیوں کا مقام دے دیا گفتگو یہ جو اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر ہر قسم کی خوبی اور قسم کا کمال جو اپنی تمام خوبیوں اور خوبصورتی اور حسن و کے ساتھ کیا ہو رہا ہے اس کے معنی بہت عظیم ہے نہ یہ کہ بند کر دیا ختم کر دیا لیکن کبھی بھی ہمارے نہیں ہے یہ ہے یہ اگر یہ جو سلام ہے اس میں ہم دوسرے غلامانے ایمانی کی ہم حضرت امام عبد القادر جیلانی رحمۃ اللہ علیہ کتاب فتوح الغیب جب آپ معنوی طور پر ایک نئی دیتے ہیں مسلمان بھی اس مقالے کا نام المقالہ توراب فلم المعنوی تو اس وقت جب آپ کے اوپر ایک مانگی موت طاری ہوتی اپنی زندگی میں آتے ہیں تو اس میں کیا کہتے ہیں کہ شاید اور بہت سی لے کر آگے کرتے ہیں سولر مہینہ دن تو کون ہوں وارث کل نبین صدیقی تو اس وقت آپ ہر نبی اور صدیق کے وارث بنتے ہیں اور رسول اور ایک رسول کے طور پر دیکھا تو خطا مولا یا ولایت آفر ختم ہوجاتی ہے اور یہ ایک ہی امت میں کتنے ہیں صلو علیہ پڑھ کے دیکھتے ہیں اس لیے یہ ختم ہونے کے معنیٰ نہیں بلکہ بلندی اور اس کی انتہا ہوتی ہے کسی بات کی قسم وہ بھی کیا ہوا ہے یہ چند ایک میں مثال کے طور پر آیا ہوں یہ تفسیر روح البیان ہے اس کے مصنف جو ہیں اسماعیل حقی البروسوی کہتے وہ خاتم النبیین خاتمہ کردیا وہ سری لنکا المفسرین ان کو لکھا ہے کہ خاتم المحققین یہ کوئی ٹائٹل سونگ لکھے ہوتے ہیں یہ حق مسکرانے کی وہ کہتے ہیں کہ ابن حجر کے بارے میں لکھتے خاتمہ الفاظ عورت اور حدیثیں ہمیں خدمات الفقہاء والمحدثین امام ابن حجر ہیثمی کے بارے میں لکھا ہے علامہ میں جو ہے حضرت عباس کے بارے میں لکھا فائنل ہفتوں میں کل حجرہ تھا حضرت آدم خاکی سے سارے لوگ ادھر سے ادھر آ رہے ہیں کہ کینیڈا میں ہجرت کر کے آئے معنی نہیں رکھتا اس کی خوبی کے فارسی میں یہ کلام کیا کہتے ہیں ہمارے مولانا جلال الدین رومی باہر ہی ختم شدہ دستوں کے باوجود مسلمان نابود خواہد بود پرسنل مرد استاد سنی تو کوئی خط میں سنت پر تو جب تو کسی خاتون میں ہوتا ہے کہ جب کسی کام میں کسی پیشے میں ہونا میں تو ایک بلندی تک پہنچتے ہیں تو یہ نہیں کہتے کہ تجھ پر یہ کام ختم ہو تاریخ ختم ہوگی میں نے کہا ہے کہ جس کا مقدر کو ختم کر دینا وہ ہے یا نہیں منطق الطیر کتاب ہے حضرت شیخ فرید الدین عطار رحمتہ اللہ علیہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے بارے میں لکھتے ختم کردہ عدل و انصاف و بحق ناصر ولد از مردان حق حضرت عمر کا عدل و انصاف کے قتل کردیا کولنگ ہے یہ معنی نہیں ہے اور نہ ہی ہو سکتے ہیں یہ ایک مشہور شاعر ہیں انوری کتاب کلیات انور کے بارے میں لکھتے ہیں مادر گیتی نظائر نظیر چمڑی بادشاہ جو ہو گیا سو ہو گیا سلطان ستمبر منسوخ مصطفی حضرت علی رضی اللہ عنہ کی شجاعت مصطفی صل وسلم پر ختم ہوئی ہے ہے فقیری ختم ہے دعا کریں یہ جو ختم کے معنی ہیں فارسی ہو یا اردو ہو اس میں یہ مان لے جاتے کہ اس کا کر دیا اور اس کے بعد میں نے دیکھیں حسرت موہانی بہت مشہور شعر ہے وہ کہتے ہیں اس نازنیں پہ ختم ہے سب سے ہوا جس کو بنا کے خود بھی ہے لہذا خدا آج پھر بھی اس طرح ختم تھا جس پر کبھی اندازہ سنبری وہ کہاں سے وہ نگاہیں التفات تو اس میں اس کا مطلب ہے کہ ان پر لعنت ختم ہوگیا اس کے بعد کوئی نہیں کر سکتا یہ جھوٹے معنی ہیں جو خود پہ لاتے ہیں پہلے شیئر کریں پھر اس پر اعتراض کا جواب غالب نے تو غالب لکھا ان لوگوں کے لئے کہتے ہیں شرم رسوائی سے جا چھپنا نقاب خاک ٹھیک شرم رسوائی سے جا چھپنا نقاب خاک میں ختم ہے الفت کی تجھ پر پردہ داری ہائے ہائے یہ جو الفت کرتے ہیں اپنے مذہب سے پردہ چاک کرتے ہیں یہ غالب حاجی صاحب اس میں ایک یہ بھی تھا پہلے اس نے خود ہی نبوت کا دروازہ کھول لیا ہے تھوڑا ساڈا سونا چاہیے تو یہ ختم کے معنی وہ نہیں ہے جو یہ کہتے ہیں ختم کے مانے وہ ہیں جو کسی سے میں بلندی کے اور عزت حاصل کر سکتے ہیں محسن نقوی میں سب سے بلند ہے وہ اس کا دروازہ کھول یا نبوت اللہ تعالی ان کو قرآن کریم پر اعتماد نہیں ہے اللہ تعالی کی بات کو یہ ماننے کے لیے تیار نہیں ہیں اور اپنے نفس کو آگے کرتے ہیں آپ نے کاشف کو آگے کرتے ہیں اپنے جھٹلانے کو آگے کرتے ہیں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے اللہ ہو یا سفیدی میں ملا کر اللہ اعلم حیث یجعل رسالتہ یہ اللہ کا کام ہے کہ وہ نبی بنائے اور آسان دے کب کس کو کہا یہ کوئی اپنے اوپر خود ساری نہیں کر سکتا ہم نے ہم تو اس دروازے کو دیکھتے ہیں کہ یہ کھلا ہے امت میں لیکن ان کی اپنی حالت یہ ہے پردیسی دے کے اور اس پر اور وہ اور جھوٹ اتنا ہے کہ جس کی حد کوئی عقبی دروازے سے حضرت عیسیٰ کو لاتے ہیں جو نبی ہے کہتے ہیں کہ انہوں نے فرمایا لا نبی یا بعدی میرے بعد کوئی نبی نہیں حضرت یوسف کے ہیں ان کے عقیدے کے مطابق کے بارے میں ہی نہیں کیا کہتے ہیں ملک الموت ہے چھا گئی کیا تو یہ حضرت عیسی علیہ الصلاۃ والسلام کا عقیدہ رکھتے ہوئے یہ جھوٹ بول رہے ہیں اور ان کا اقرار بھی جھوٹا ہے دروازے کی بات ہے اور نبوت کا دروازہ دیکھئے قرآن کریم فرماتا ہے ایک آدمی نے پڑھی ہے اللہ یصطفی من الملائکہ اللہ تعالی مغفرت فرمائے اللہ والرسول فاولئک مع الذین انعم اللہ علیہم من النبیین والصدیقین والشہداء والصالحین شرط رکھی ہے کہ آپ جو نبوت کا دروازہ کھلا ہے اور پھر یا بنی آدم اما یاتینکم سورۃ الاعراف کی آیت نمبر 36 ہے ما کان اللہ ولی المؤمنین علامات ملائے تفسیر جلالین میں اس کی بڑی وجہ تفسیر کے پھر اللہ تعالی اللہ تعالی اپنا ایک رسول چلے گا جو کھرے اور کھوٹے میں غیر ممنوعہ فرقہ کے دکھائے گا انشاءاللہ دکھا دیا جائے گا پھر آخر میں خادم صاحب ہے سورۃ آل عمران کی آیت 82 میں اللہ سے جب بھی تمہیں رسول ہیں تم نے اس پر ایمان لانا ہے اور اس کی مدد کرنی ہے اور اس کا جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا خاص طور پر ذکر سورۃ احزاب میں جس میں ایک خاتون بھی خاتم النبیین ہے اور اس کا یہ زمانہ کرتے ہیں اسی صورت میں ویسے بھی ہے تو اس کی مدد کرنی ہے و اذ اخذنا من النبیین امساک ہو ومن کا اس لیے یہ تو قرآن کریم کی باتیں ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خود یہ بتایا ہے کہ نازل ہوگا یوسف نبی اللہ عیسیٰ و اصحابہ و ابن ابی الاحوص ابو انبیاء الہی صاحب مسلم کتاب الفتن بابو الرجالو ما تجھے نبوت کا دروازہ کھلے ہیں اور دروازے ہیں جو کھلے ہیں حدیث میں بھی السلام نے فرمایا ابوبکر نواز علماء الٰہی کا لب یو کے سب سے افضل فرد ہے ایک نبی پیدا ہوگا یہ کون ہمیں تخلیق مرلے پیدائش کے بعد ہو رہی ہے یہ بھی ابو داود کتاب الملاحم میں الیاس گھمن نیو بیان بیان اس کے اور میرے درمیان کوئی نبی وہ نبی ہیں میں بھی نبی محمود علیہ الصلاۃ والسلام نے صاف اعلان کیا ہے ابن مریم ہوا مگر انہیں ہو نیز مہدی ہوں مگر بے حد اور بے کار ساری رات اور آپ نے فرمایا کہ یہ میں نے دروازہ نہیں کھولا خدا نے کھولا ہے خدا نے عہد کا دن ہے دکھایا مسیح وقت اس دنیا میں آیا صحابہ سے ملا جب مجھ کو پایا مبارک وہ جو ایمان لایا وہی میں ان کو ساقی نے پلا دی آزادی علامہ محمد اللہ رب العالمین اللہ الزاہدی صاحب ناظرین کرام انشاءاللہ اگلے پروگرام میں ایک نئے طرز کے جواب کے ساتھ آپ تب تک کے لئے اسلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ سفید بہت فلم دکھائیں احمدیہ مسلم جماعت فرشتہ ثانیہ کی الہی تحریک

#Ahmadi#Islam#TrueIslamCA#Truth#Answer 𝐎𝐑𝐈𝐆𝐈𝐍𝐀𝐋 𝐑𝐄𝐅𝐄𝐑𝐄𝐍𝐂𝐄𝐒 𝐅𝐈𝐋𝐄: https://bit.ly/2PXpaDq 𝐕𝐈𝐃𝐄𝐎 𝐇𝐢𝐠𝐡𝐥𝐢𝐠𝐡𝐭𝐬: 𝐏𝐀𝐑𝐓 – 𝟎𝟏 𝐓𝐑𝐔𝐄 𝐌𝐞𝐚𝐧𝐢𝐧𝐠 𝐨𝐟 𝐊𝐡𝐚𝐭𝐚𝐦 (ختم) 𝐢𝐧 𝐀𝐫𝐚𝐛𝐢𝐜, 𝐏𝐞𝐫𝐬𝐢𝐚𝐧 𝐚𝐧𝐝 𝐔𝐫𝐝𝐮 1:15 𝑴𝒊𝒓𝒛𝒂 𝑺𝒂𝒉𝒊𝒃 (𝒂𝒔) 𝒘𝒂𝒔 𝒊𝒏𝒊𝒕𝒊𝒂𝒍𝒍𝒚 𝒄𝒐𝒏𝒗𝒊𝒏𝒄𝒆𝒅 𝒐𝒇 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 𝑴𝒖𝒉𝒂𝒎𝒎𝒂𝒅 (ﷺ) 𝒂𝒔 𝒕𝒉𝒆 𝑳𝑨𝑺𝑻 𝑷𝒓𝒐𝒉𝒑𝒉𝒆𝒕; 𝒃𝒖𝒕 𝒍𝒂𝒕𝒆𝒓 𝒐𝒏, 𝒏𝒐𝒕 𝒐𝒏𝒍𝒚 𝒅𝒆𝒏𝒊𝒆𝒅 𝒃𝒖𝒕 𝒐𝒑𝒆𝒏𝒆𝒅 𝒖𝒑 𝒂 𝑵𝑬𝑾 𝑫𝒐𝒐𝒓 𝒐𝒇 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕𝒉𝒐𝒐𝒅 𝒇𝒐𝒓 𝒉𝒊𝒎𝒔𝒆𝒍𝒇! 𝐀𝐑𝐀𝐁𝐈𝐂 (عربی): 𝐌𝐞𝐚𝐧𝐢𝐧𝐠 𝐨𝐟 𝐭𝐡𝐞 𝐰𝐨𝐫𝐝 𝐊𝐡𝐚𝐭𝐚𝐦 (ختم) 1:40 𝑴𝒆𝒂𝒏𝒊𝒏𝒈 𝒐𝒇 𝒕𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒎 (ختم) 𝒇𝒓𝒐𝒎 𝑴𝒖𝒇𝒓𝒊𝒅𝒂𝒕 𝑹𝒂𝒈𝒉𝒊𝒃 (المفردات فی غریب القرآن) 3:18 𝑷𝒓𝒂𝒚𝒆𝒓 𝒇𝒐𝒓 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎 𝒖𝒍 𝑸𝒖𝒓𝒂𝒏 – 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎 𝒎𝒆𝒂𝒏𝒔 𝑪𝒐𝒎𝒑𝒍𝒆𝒕𝒆 𝒃𝒖𝒕 𝒏𝒐𝒕 𝑭𝒊𝒏𝒊𝒔𝒉! 4:00 𝑬𝒙𝒑𝒍𝒂𝒏𝒂𝒕𝒊𝒐𝒏 𝒐𝒇 𝒕𝒉𝒆 𝒗𝒆𝒓𝒔𝒆 (شعر) 𝒂𝒏𝒅 𝒘𝒉𝒂𝒕 𝒅𝒐𝒆𝒔 𝒕𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎 (ختم) 𝒎𝒆𝒂𝒏 𝒉𝒆𝒓𝒆 5:00 𝑸𝒖𝒐𝒕𝒆 𝒇𝒓𝒐𝒎 𝒕𝒉𝒆 𝒇𝒂𝒎𝒐𝒖𝒔 𝑸𝒂𝒔𝒆𝒆𝒅𝒂 (قصیدہ) 𝒘𝒓𝒊𝒕𝒕𝒆𝒏 𝒃𝒚 𝒕𝒉𝒆 𝑷𝒓𝒐𝒎𝒊𝒔𝒆𝒅 𝑴𝒆𝒔𝒔𝒊𝒂𝒉 (𝒂𝒔) 𝒆𝒙𝒑𝒍𝒂𝒊𝒏𝒊𝒏𝒈 𝒉𝒕𝒆 𝒓𝒆𝒂𝒍 𝒎𝒆𝒂𝒏𝒊𝒏𝒈 𝒐𝒇 𝒕𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎. 6:25 𝑰𝒎𝒂𝒎 𝑨𝒃𝒅𝒖𝒍 𝑸𝒂𝒅𝒊𝒓 𝑱𝒊𝒍𝒂𝒏𝒊 (𝒓𝒂) 𝒓𝒆𝒇𝒆𝒓𝒆𝒏𝒄𝒆 𝒇𝒓𝒐𝒎 𝑭𝒖𝒕𝒖𝒉𝒖𝒍 𝑮𝒂𝒊𝒃 (فتوح الغیب) 7:25 𝑻𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅𝒔 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎𝒖𝒍 𝑴𝒖𝒇𝒂𝒔𝒔𝒊𝒓𝒊𝒏 (خاتم المفسرین) 𝒂𝒏𝒅 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎𝒖𝒍 𝑴𝒖𝒉𝒂𝒒𝒒𝒆𝒒𝒆𝒆𝒏 (خاتم المحقیقین) 𝒖𝒔𝒆𝒅 𝒇𝒐𝒓 𝒈𝒓𝒆𝒂𝒕 𝒔𝒄𝒉𝒐𝒍𝒂𝒓𝒔 𝒐𝒇 𝑰𝒔𝒍𝒂𝒎 7:55 𝑼𝒔𝒆 𝒐𝒇 𝒘𝒐𝒓𝒅 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎𝒖𝒍 𝑯𝒖𝒇𝒇𝒂𝒛 (خاتم الحفاظ) 𝒕𝒐 𝒔𝒉𝒐𝒘 𝒕𝒉𝒆 𝒃𝒆𝒔𝒕 𝒂𝒎𝒐𝒏𝒈 𝒕𝒉𝒆 𝑯𝒖𝒇𝒇𝒂𝒛 8:10 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑻𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎 (ختم) 𝒊𝒔 𝒖𝒔𝒆𝒅 𝒕𝒐 𝒓𝒆𝒑𝒓𝒆𝒔𝒆𝒏𝒕 𝒕𝒉𝒆 𝒎𝒐𝒔𝒕 𝑷𝒓𝒐𝒎𝒊𝒏𝒆𝒏𝒕, 𝑫𝒊𝒔𝒕𝒊𝒏𝒈𝒖𝒊𝒔𝒉𝒆𝒅, 𝑨𝒄𝒄𝒐𝒎𝒑𝒍𝒊𝒔𝒉𝒆𝒅, 𝑹𝒆𝒏𝒐𝒘𝒏𝒆𝒅 𝒂𝒏𝒅 𝑹𝒆𝒄𝒐𝒈𝒏𝒊𝒛𝒆𝒅 𝒑𝒆𝒓𝒔𝒐𝒏 𝒐𝒓 𝒕𝒉𝒊𝒏𝒈. 𝐏𝐄𝐑𝐒𝐈𝐀𝐍 (فارسی) : 𝐌𝐞𝐚𝐧𝐢𝐧𝐠 𝐨𝐟 𝐭𝐡𝐞 𝐰𝐨𝐫𝐝 𝐊𝐡𝐚𝐭𝐚𝐦 (ختم) 8:25 𝑴𝒐𝒖𝒍𝒂𝒏𝒂 𝑱𝒂𝒍𝒂𝒍 𝒖𝒅 𝑫𝒊𝒏 𝑹𝒖𝒎𝒊’𝒔 𝒖𝒔𝒆 𝒂𝒏𝒅 𝒆𝒙𝒑𝒍𝒂𝒏𝒂𝒕𝒊𝒐𝒏 𝒐𝒇 𝒕𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅 𝒇𝒓𝒐𝒎 𝒉𝒊𝒔 𝑴𝒂𝒔𝒏𝒂𝒗𝒊 (مثنوی معانوی سے مولانا جلال الدین رومی کا حوالہ) 9:00 𝑯𝒂𝒛𝒓𝒂𝒕 𝑺𝒉𝒆𝒊𝒌𝒉 𝑭𝒂𝒓𝒊𝒅𝒖𝒅𝒅𝒊𝒏 𝑨𝒕𝒕𝒂𝒓 (𝒓𝒂) 𝒓𝒆𝒇𝒆𝒓𝒆𝒏𝒄𝒆 𝒐𝒇 𝒔𝒕𝒂𝒕𝒊𝒏𝒈 𝑱𝒖𝒔𝒕𝒊𝒄𝒆 𝒊𝒔 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎 (𝒂𝒕 𝒊𝒕𝒔 𝒃𝒆𝒔𝒕) (حضرت عمتر پر انصاف ختم ہے) 𝐔𝐑𝐔𝐃 (اردو) : 𝐌𝐞𝐚𝐧𝐢𝐧𝐠 𝐨𝐟 𝐭𝐡𝐞 𝐰𝐨𝐫𝐝 𝐊𝐡𝐚𝐭𝐚𝐦 (ختم) 10:10 𝑴𝒆𝒂𝒏𝒊𝒏𝒈 𝒐𝒇 𝑲𝒉𝒂𝒕𝒂𝒎 𝒊𝒏 3 𝒅𝒊𝒇𝒇𝒆𝒓𝒆𝒏𝒕 𝒗𝒆𝒓𝒔𝒆𝒔 (اشعار میں ختم کا مطلب) 𝐏𝐀𝐑𝐓 – 𝟎𝟐 𝐂𝐨𝐧𝐭𝐢𝐧𝐮𝐚𝐭𝐢𝐨𝐧 𝐨𝐟 𝐏𝐫𝐨𝐩𝐡𝐞𝐭𝐡𝐨𝐨𝐝 𝐚𝐧𝐝 𝐭𝐡𝐞 𝐇𝐨𝐥𝐲 𝐏𝐫𝐨𝐩𝐡𝐞𝐭 (ﷺ) 𝐜𝐚𝐥𝐥𝐞𝐝 𝐭𝐡𝐞 𝐏𝐫𝐨𝐦𝐢𝐬𝐞𝐝 𝐄𝐬𝐚 𝐚 “𝐏𝐫𝐨𝐩𝐡𝐞𝐭 𝐨𝐟 𝐆𝐨𝐝” 11:50 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑯𝒐𝒍𝒚 𝑸𝒖𝒓𝒂𝒏 – 𝑶𝒏𝒍𝒚 𝑨𝒍𝒍𝒂𝒉 𝒌𝒏𝒐𝒘𝒔 𝒘𝒉𝒆𝒏, 𝒘𝒉𝒆𝒓𝒆 𝒂𝒏𝒅 𝒉𝒐𝒘 𝒕𝒐 𝒔𝒆𝒏𝒅 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 12:30 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑰𝒎𝒂𝒎 𝑺𝒚𝒐𝒐𝒕𝒊 (𝒓𝒂) 𝒂𝒏𝒅 𝑰𝒎𝒂𝒏 𝑨𝒃𝒅𝒖𝒍 𝑸𝒂𝒅𝒊 𝑱𝒊𝒍𝒂𝒏𝒊 𝒔𝒕𝒂𝒕𝒆 𝒕𝒉𝒂𝒕 𝒘𝒉𝒐𝒔𝒐𝒆𝒗𝒆𝒓 𝒔𝒂𝒚𝒔 𝒕𝒉𝒂𝒕 𝒕𝒉𝒆 𝒄𝒐𝒎𝒊𝒏𝒈 𝑴𝒆𝒔𝒔𝒊𝒂𝒉 𝒘𝒊𝒍𝒍 𝒏𝒐𝒕 𝒃𝒆 𝒂 𝒑𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 𝒊𝒔 𝒔𝒂𝒚𝒊𝒏𝒈 𝑲𝒖𝒇𝒓. 13:00 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑸𝒖𝒓𝒂𝒏 (4:70) 𝑯𝒐𝒍𝒚 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 (ﷺ) 𝒕𝒓𝒖𝒆 𝒐𝒃𝒆𝒅𝒊𝒆𝒏𝒄𝒆 𝒄𝒂𝒏 𝒓𝒂𝒊𝒔𝒆 𝒂 𝒑𝒆𝒓𝒔𝒐𝒏 𝒕𝒐 𝒕𝒉𝒆 𝒔𝒕𝒂𝒕𝒖𝒔 𝒐𝒇 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 13:15 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑸𝒖𝒓𝒂𝒏 (7:36) 𝑨𝒍𝒍𝒂𝒉 𝒕𝒉𝒆 𝒆𝒙𝒂𝒍𝒕𝒆𝒅 𝒂𝒅𝒗𝒊𝒔𝒊𝒏𝒈 𝒑𝒆𝒐𝒑𝒍𝒆 𝒕𝒐 𝒂𝒄𝒄𝒆𝒑𝒕 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 𝒘𝒉𝒆𝒏 𝒉𝒆 𝒂𝒑𝒑𝒆𝒂𝒓𝒔 𝒘𝒊𝒕𝒉 𝒓𝒆𝒉𝒆𝒂𝒓𝒔𝒊𝒏𝒈 𝑯𝒊𝒔 𝑺𝒊𝒈𝒏𝒔 𝒖𝒏𝒕𝒐 𝒕𝒉𝒆𝒎, 𝒕𝒉𝒆𝒚 𝒔𝒉𝒐𝒖𝒍𝒅 𝒂𝒄𝒄𝒆𝒑𝒕 𝒉𝒊𝒎. 13:25 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑸𝒖𝒓𝒂𝒏 (3:180) “𝑩𝒖𝒕 𝑨𝒍𝒍𝒂𝒉 𝒄𝒉𝒐𝒐𝒔𝒆𝒔 𝒐𝒇 𝑯𝒊𝒔 𝑴𝒆𝒔𝒔𝒆𝒏𝒈𝒆𝒓𝒔 𝒘𝒉𝒐𝒎 𝑯𝒆 𝒑𝒍𝒆𝒂𝒔𝒆𝒔. 𝑩𝒆𝒍𝒊𝒆𝒗𝒆, 𝒕𝒉𝒆𝒓𝒆𝒇𝒐𝒓𝒆, 𝒊𝒏 𝑨𝒍𝒍𝒂𝒉 𝒂𝒏𝒅 𝑯𝒊𝒔 𝑴𝒆𝒔𝒔𝒆𝒏𝒈𝒆𝒓𝒔.” 13:50 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑸𝒖𝒓𝒂𝒏 (3:82) 𝒂𝒏𝒅 (33:8) 𝑪𝒐𝒗𝒆𝒏𝒂𝒏𝒕 𝒐𝒇 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕𝒔 𝒊𝒏𝒄𝒍𝒖𝒅𝒊𝒏𝒈 𝒕𝒉𝒆 𝑯𝒐𝒍𝒚 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 (ﷺ) 14:25 𝑷𝑹𝑶𝑶𝑭: 𝑯𝒂𝒅𝒊𝒕𝒉 𝒇𝒓𝒐𝒎 𝑺𝒂𝒉𝒊𝒉 𝑴𝒖𝒔𝒍𝒊𝒎: 𝑻𝒉𝒆 𝒉𝒐𝒍𝒚 𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 𝑴𝒖𝒉𝒂𝒎𝒎𝒂𝒅 (ﷺ) 𝒖𝒔𝒆𝒔 𝒕𝒉𝒆 𝒘𝒐𝒓𝒅 “𝑷𝒓𝒐𝒑𝒉𝒆𝒕 𝒐𝒇 𝑨𝒍𝒍𝒂𝒉” 𝒇𝒐𝒓 𝒕𝒉𝒆 𝒑𝒓𝒐𝒎𝒊𝒔𝒆𝒅 𝑰𝑺𝒂 𝒇𝒐𝒓 4 𝒕𝒊𝒎𝒆𝒔!SHOW LESS

 47 total views,  2 views today

Leave a Reply

%d bloggers like this: